اے صُبح کے غمخوارو - کوہِ ندا ۔۔ مصطفیٰ زیدی

Published on by KHAWAJA UMER FAROOQ



 
اے صُبح کے غمخوارو ، اِس رات سے مت ڈرنا
جس ہات میں خنجر ہے اس ہات سے مت ڈرنا

خورشید کے متوالو ذرات سے مت ڈرنا
چنگیز نژادوں کی اوقات سے مت ڈرنا

ہاں شامل ِ لب ہو گی نفرت بھی ، ملامت بھی
یارانہ کدورت بھی ، دیرینہ عداوت بھی

گزرے ہُوئے لمحوں کی مرحوم رفاقت بھی
قبروں پہ کھڑے ہو کر جذبات سے مت ڈرنا

آباد ضمیروں کو اُفتاد ِ ستم کیا ہے
آسودہ ہو جب دل پھر تکلیف ِ شکم کیا ہے

تدبیر ِ فلک کیا ہے ، تقدیر ِ اُمم کیا ہے
مَحرم ہو تو دو دن کے حالات سے مت ڈرنا

رُوداد ِ سر ِ دامن کب تک نہ عیاں ہو گی
نا کردہ گناہوں کے منہ میں تو زباں ہو گی

جس وقت جرائم کی فہرست بیاں ہو گی
اُس وقت عدالت کے اثبات سے مت ڈرنا

Enhanced by Zemanta

Comment on this post