دھرنوں سے معیشت کو ڈھائی ارب ڈالر کا نقصان

Published on by KHAWAJA UMER FAROOQ

دھرنوں سے معیشت کو ڈھائی ارب ڈالر کا نقصان

 اقتصادی رابطہ کمیٹی کو جمعرات کے روز بتایا گیا کہ اسلام آباد میں پاکستان تحریک انصاف اور پاکستان عوامی تحریک کے دھرنوں کے نتیجے میں ملکی معیشت کو تقریبا ڈھائی ارب ڈالر کا نقصان ہوا۔

ڈان نیوز کے مطابق وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی زیر صدارت ای سی سی کا اجلاس ہوا جس کے دوران شرکاء کو دھرنوں سے معیشت پر پڑنے والے اثرات پر بریفنگ دی گئی۔

اجلاس کے دوران شرکاء کو بتایا گیا کہ سیاسی بے یقینی کی وجہ سے ملکی زرمبادلہ کو دو ارب چالیس کروڑ ڈالر کا جھٹکا لگا ہے۔

اجلاس میں بتایا گیا کہ سیاسی بے یقینی کی وجہ سے روپے کی قدر میں بھی ایک اعشاریہ چھ فیصد کی کمی دیکھی گئی، جس کی وجہ سے ملک پر قرضوں کا بوجھ مزید پانچ سو ارب روپے بڑھ گیا۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ دھرنوں کےباعث ٹیکس وصولیوں پر بھی منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں اور اگست میں ٹیکس وصولیوں میں صرف ایک اعشاریہ چھ فیصد اضافہ ہوسکا۔

اجلاس میں ایل پی جی پالیسی پر بھی غور کیا گیا اور سی این جی سیکٹر کے لیے ایل این جی درآمد کرنے کی تجویز منظور کرلی گئی

اقتصادی رابطہ کمیٹی نے ایل پی جی پالیسی مشترکہ مفادات کونسل کو بھیج دی۔

ای سی سی نے صنعتوں کو گیس فراہمی کے لیے ترجیح دینے کا مطالبہ مسترد کرتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ صنعتوں کو گیس کی دستیابی کے مطابق ہی گیس فراہم کی جا سکتی ہے۔

 

Comment on this post